Tuesday, January 8, 2013

My heart is an idiot


I am not much of poetry lover but I love poetry of Munir Niazi as he wrote something that moves others' emotions and heart.

However, I recently came across this brilliant piece of expression by Noon Seen Nayyer and thought of sharing with my viewers. Each verse and word of it is thought provoking and at least made me to ponder over when I correlate it with what is happening around us these days.

اب تو دل پیار کے انداز سمجھتا ہی نہیں
میری سنتا ہی نہیں مجھہ سے سنبھلتا ہی نہیں

میں جو پوچھوں کہ کوئی تجھکو اگر چاہنے لگے ؟
ان سنی کرتا ھے خوش ھو کے دھڑکتا ہی نہیں 


-->

میری نظروں سے ملاتا ہی نہیں نظریں یہ اب
میں کہوں کچھہ بھی مجھے غور سے تکتا ہی نہیں


میری آنکھوں میں اترتی ہوئی تنہائی کو
دیکھتا روز ھے اس دکھہ پہ تڑپتا ہی نہیں


اپنی خاموشی و خود غرضی پہ اتراتا ھے
ایسا بے درد ھے غم سہہ کے سسکتا ہی نہیں

کیسے سمجھاؤں کہ یہ مجھہ سے صلاح پھر کر لے
کیسے بہلاؤں کہ دل مجھہ سے بہلتا ہی نہیں

میں ہی لے دے کے اسے ساتھہ لئے پھرتی ھوں
یہ تو پتھر ھے کسی بات پہ ہنستا ہی نہیں

کیسا بے حس سا نیر دل ھے تیرے پہلو میں
کچھہ بھی ھو غم یا خوشی تجھہ سے لپٹتا ہی نہیں


Poetry by Noon Seen Nayyer
Poster Credit: Chrispiascik

0 comments:

Post a Comment

Twitter Delicious Facebook Digg Stumbleupon Favorites More

 
Design by Free WordPress Themes | Bloggerized by Lasantha - Premium Blogger Themes | Facebook Themes